بسم الله الرحمن الرحيم

اَلْحَمْدُ لِله رَبِّ الْعَالَمِيْن،وَالصَّلاۃ وَالسَّلام عَلَی النَّبِیِّ الْکَرِيم وَعَلیٰ آله وَاَصْحَابه اَجْمَعِيْن۔

نمازِ حاجت (صلاۃ الحاجۃ(

نماز اللہ تبارک وتعالیٰ سے تعلق قائم کرنے اور اپنی ضرورتوں اورحاجتوں کو مانگنے کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔ اللہ تعالیٰ اپنے پاک کلام میں ارشاد فرماتا ہے : اے ایمان والو! صبر اور نماز کے ذریعہ مدد چاہو۔ (سورۃ البقرہ ۱۵۳) صبر اور نماز کے ذریعہ مدد طلب کرو۔۔۔۔۔۔ (سورۃ البقرۃ ۴۵) اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ میں تمہارے ساتھ ہوں اگر تم نماز قائم رکھو۔(سورۃ المائدۃ ۱۲)
لہذا جب بھی کوئی پریشانی یا مصیبت سامنے آئے تو ہمیں چاہئے کہ صبر کریں اور نماز کا خاص اہتمام کرکے اللہ تعالیٰ سے تعلق قائم کریں۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم   بھی ہر پریشانی کے وقت نماز کی طرف متوجہ ہوتے تھے جیسا کہ حدیث میں ہے: حضرت حذیفہ رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم   کو جب بھی کوئی اہم معاملہ پیش آتا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم   فوراً نماز کا اہتمام فرماتے۔ (ابو داؤد ومسند احمد)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم  پانچ فرض نمازوں کے علاوہ نماز تہجد، نماز اشراق، نماز چاشت، تحےۃ الوضوء اور تحےۃ المسجد کا بھی اہتمام فرماتے۔ اور پھر خاص خاص مواقع پر اپنے رب کے حضور توبہ واستغفار کے لئے نماز ہی کو ذریعہ بناتے۔ سورج گرہن یا چاند گرہن ہوتا تو مسجد تشریف لے جاتے۔ زلزلہ، آندھی یا طوفان حتی کہ تیز ہوا بھی چلتی تو مسجد تشریف لے جاکر نماز میں مشغول ہوجاتے۔ فاقہ کی نوبت آتی یا کوئی دوسری پریشانی یا تکلیف پہنچتی تو مسجد تشریف لے جاتے۔ سفر سے واپسی ہوتی تو پہلے مسجد تشریف لے جاکر نماز ادا کرتے۔ اس لئے ہمیں بھی چاہئے کہ نمازوں کا خاص اہتمام کریں۔ اور اگر کوئی پریشانی یا مصیبت آئے تو نماز ادا کرکے اللہ تعالیٰ سے مدد مانگیں۔
اللہ تبارک وتعالیٰ سے اپنی دنیاوی اور اخروی ضرورت کو مانگنے کا سب سے بہتر طریقہ یہ ہے کہ دو رکعت نماز اطمینان، سکون اور خشوع وخضوع سے پڑھ کرخوب عاجزی وانکساری کے ساتھ اللہ جل شانہ سے دعائیں کریں۔ حضرت عبد اللہ بن ابی اوفی رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم   نے ارشاد فرمایا: جس شخص کو اللہ تعالیٰ سے یا کسی آدمی سے کوئی حاجت ہو تو وہ اچھی طرح وضو کرے، پھر دو رکعت نماز ادا کرے، پھر اللہ تعالیٰ کی حمد وثنا بیان کرے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  پر درود بھیجے اور یہ دعا پڑھے (ترجمہ) : اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں، وہ بہت بردبار اور نہایت کرم کرنے والا ہے، (ہر عیب سے) پاک اور عرشِ عظیم کا مالک ہے، تمام تعریفیں اللہ ہی کے لئے ہیں جو تمام جہانوں کو پیدا کرنے والا ہے۔ (یا اللہ!) میں تجھ سے تیری رحمت کے اسباب اور تیری بخشش کے وسائل، نیز ہر نیکی سے حصہ پانے اور ہر گناہ سے محفوظ رہنے کا سوال کرتا ہوں۔ یا ارحم الراحمین! میرے تمام گناہ معاف فرمادیجئے، میری ساری پریشانیاں دور کردیجئے، اور میری تمام ضرورتیں جو تیری پسندیدہ ہوں پوری فرمادیجئے۔ (ترمذی ، ابن ماجہ) پھر جو ضرورت ہے اس کو اللہ تعالیٰ سے خوب مانگیں۔
حضرت ابو الدرداء رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا: جس نے اچھی طرح وضو کیا پھر خشوع وخضوع سے دو رکعت نماز پڑھی، اللہ تعالیٰ اس کے سوال کو پورا کرے گا، جلد یا دیر سے (جیسے چاہے)۔ (مسند احمد)
محمد نجیب قاسمی سنبھلی، ریاض (www.najeebqasmi.com)